سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کراچی میں رینجرز کی غیرقانونی اورغیرآئینی کارروائیوں پر ازخود نوٹس لیں ، الطاف حسین

متحدہ قومی موومنٹ کے قائد جناب الطاف حسین نے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس انورظہیرجمالی سے اپیل کی ہے کہ کراچی میں رینجرز کی غیرقانونی چھاپوں ،گرفتاریوں اورغیرآئینی کارروائیوں پر ازخود نوٹس لیا جائے ۔ یہ بات انہوں نے امریکہ ،کینیڈا، برطانیہ اور بیلجئم کے ذمہ داران اور کارکنان سے بیک وقت ٹیلی فونک خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اپنے خطاب میں جناب الطاف حسین نے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس انورظہیر جمالی سے اپیل کی کہ وہ ازخود نوٹس لیکر ڈی جی رینجرز بلال اکبر کی سربراہی میں رینجرز کے غیرقانونی چھاپوں ، گرفتاریوں اور ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کے جھوٹے بیانات پر انہیں گرفتارکرنے کا حکم دیں اور اگر وہ غیرقانونی اورغیرآئینی کارروائیاں کرنے پر بلال اکبراور راؤ انوار کی گرفتاری کا حکم نہیں دے سکتے تو اپنے عہدے سے استعفیٰ دیدیں۔ جناب الطاف حسین نے کہاکہ چیف جسٹس انورظہیر جمالی تحقیقات کرائیں کہ چاردیوار ی کے اندر ہونے والے ایم کیوایم کے پرامن اجتماعات پر رینجرز نے کیوں اورکس قانون کے تحت چھاپہ مارا ، اگر وہ رینجرز کے اس غیرقانونی اورغیرآئینی عمل کی تحقیقات کا حکم نہیں دیتے تو اپنے عہدے سے استعفیٰ دیدیں ۔ جناب الطاف حسین نے انسانی حقوق کی تنظیموں اور این جی اوز کے نمائندوں کو مخاطب کرتے ہوئے ان سے اپیل کہ وہ پاکستان میں مہاجروں کے ماورائے عدالت قتل ، مہاجروں کی فریڈم آف اسمبلی ، اظہاررائے کی آزادی پر پابندی، انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں اور مہاجروں کی بلاجواز وغیرقانونی گرفتاریوں کے خلاف صدائے احتجاج بلندکریں۔